’سوری سر، میں مجاز نہیں ہوں‘نوازشریف کو صاف جواب
  • 0
  • 0

http://tuition.com.pk
liabilities nawaz sharif

سابق وزیراعظم محمد نوازشریف کے خلاف العزیزیہ ریفرنس کیس کی سماعت کے دور ان اچانک بجلی چلی گئی، عدالت کے جج محمد بشیر نے ایمرجنسی لائٹس میں سماعت کی، نوازشریف نے ایک اہلکار کو اپنے پاس بلا کر کھڑکیوں کے دروازے کھولنے اور پردے ہٹانے کی ہدایت کی تو اس نے آگے سے کہاکہ ’’سوری سر، میں مجاز نہیں ہوں‘‘۔

بدھ کو سابق وزیراعظم نوازشریف کی العزیزیہ ریفرنس میں پیشی کے موقع پربجلی چلی گئی سابق وزیراعظم میڈیا سے گفتگو سے فارغ ہونے کے بعد کمرہ عدالت میں داخل ہوئے تو سوال کیا کہ یہ اندھیرا اندھیراکیوں ہے ؟اس پر صحافی نے جواب دیا کہ آپ کے آتے ہی بجلی چلی گئی ہے ،اس پر احتساب عدالت کے جج نے ایمرجنسی لائٹس میں سماعت کا آغازکیا۔ احتساب عدالت اسلام آباد سکیورٹی پر مامور عملے نے میاں نواز شریف کے کہنے پر کمرہ عدالت کی کھڑکیاں نہ کھولیں۔ طویل ترین لوڈشیڈنگ کی وجہ سے کمرہ عدالت میں حبس تھا جس کی وجہ سے میاں نواز شریف گرمی برداشت نہ کر سکے اور انہوں نے سکیورٹی پر مامورعملے کے ایک شخص کو اپنے پاس بلایا اور اسے کھڑکیاں کھولنے اور پردے ہٹانے کا کہا کہ تازہ ہوا اندر آئے جس پر اس شخص نے کہا کہ سوری سر میں ایسا کرنے کا مجاز نہیں،گرمی کی بدولت میاں نوازشریف اپنی نشست پر پہلو بدلتے رہے اور بے چین نظر آئے۔وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کے ترجمان ڈاکٹر مصدق ملک کے کمرہ عدالت میں آنے کے بعد سابق وزیر اعظم نے انہیں نوٹ شدہ کاغذات دیئے اور ضروری ہدایات بھی دیں جنہیں انہوں نے اپنی جیب میں ڈال دیا ، میڈیا سے گفتگو کے دوران جب نواز شریف سے شہباز شریف کے حوالے سے سوال کیا گیا تو نواز شریف تو خاموش رہے اور آگے بڑھ گئے لیکن عقب سے خاتون نے کہا جی ہاں کیوں نہیں وہ ان کے ساتھ ہیں۔

تازہ ترین

اپنا تبصرہ چھوڑیں